اگرآپ کافون چوری ہوگیاہے یاکسی نے چھین لیاہے تواسے کیسے بلاک کروائیں ،پی ٹی اے نے آسان طریقہ متعارف کرادیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک )پاکستان میں گمشدہ یا چھینے جانے والے فون کو بلاک کروانے کا آسان طریقہ متعارف کروا دیا گیا۔تفصیلات کے مطابق پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن نے گمشدہ فون بلاک کروانے کا آسان طریقہ متعارف کروا دیا گیا۔ موبائل فون کے گُم جانے کی صورت میں صارف کو سب سے زیادہ جس چیز کے لیے فکرمند ہوتا ہے وہ موبائل میں موجود اسکا ڈیٹا ہوتا ہے، اگر وقت پر فون کو بلاک یا اسکی رپورٹ نا کروایا جائے تو کوئی بھی اسکا غلط استعمال کر کے آپ کو پریشانی میں ڈال سکتا ہے۔اس صورت میں پی ٹی اے نے آن لائن طریقہ صارفین کو بتایا ہے جس سے وہ گھر

بیٹھے اپنے گمشدہ فون کی شکایت کروا سکتا ہے۔دی نیو لاسٹ اینڈ اسٹولن ڈیوائس سسٹم کے تحت آپ گمشدگی کی شکایت کر سکتے ہیں، پی ٹی اے کی شکایت کی ویب سائٹ پر جا کر دی گئی ہدایات پر عمل کریں۔ آپ کو شکایت درج کروانے کے لیے اپنی کچھ بنیادی تفصیلات بتانا ہوں گی جیسا کہ نام، پتہ، ای میل اور شناختی کارڈ وغیرہ، اسکے علاوہ آپ کو گمشدہ فون سے متعلق تفصیلات بھی بتانا ہوں گی۔گمشدگی کی درخواست دائر کروانے کے بعد آپ کو ایک ریفرنس نمبر دیا جائے گا جس کے بعد 24 گھنٹے کے اندر اندر آپ کا فون بلاک کر دیا جائے گا۔اور اگر اس دوران آپ کا فون مل جاتا ہے تو اس ویب سائٹ پر جا کر آپ اَن بلاک کے آپشن کا انتخاب کر کے اپنا فون اَن بلاک کروا سکتے ہیں۔ طیارے سے تصادم، جہاز کی پیراشوٹ کے ذریعے لینڈنگ کی ویڈیو وائرلواشنگٹن (ویب ڈیسک )طیارے سے تصادم کے بعد ایک جہاز کی پیراشوٹ کے ذریعے لینڈنگ کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔تفصیلات کے مطابق امریکہ میں دورانِ پرواز دو طیاروں کا تصادم ہوا جس میں خوش قسمتی سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ تاہم اب اس حادثے میں ایک چھوٹے طیارے کی پیراشوٹ کے ذریعے زمین پر محفوظ طریقے سے اترنے کی ویڈیو منظرِ عام پر آگئی۔سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر وائرل ویڈیو میں ایک انجن والے چھوٹے طیارے “سرس ایس آر 22” کو فضا سے پیراشوٹ کے ذریعے میدانی علاقے میں اترتا ہوا دیکھا جا سکتا ہے۔تصادم اور اس کے بعد پیراشوٹ کی مدد کی گئی ہنگامی لینڈنگ میں جہاز کو معمولی نقصان پہنچا اور دونوں پائلٹ مکمل طور پر محفوظ رہے جبکہ یہ طیارہ فضا میں جس مال برادر طیارے سے ٹکرایا تھا وہ ایئرپورٹ پر حفاظت سے اتارا گیا۔یہ واقع 12 مئی کو پیش آیا جبکہ اس واقعے کی تحقیقات کے لیےانکوائری کمشن بھی تشکیل دیا گیا تھا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.