ایک محفوظ اور انتہائی سکیورٹی والے علاقے میں دہشت گردی کا واقعہ کیسے ہوا؟

بلوچستان اور کوئٹہ میں دہشت گردی کے پے درپے واقعات پوری قوم کیلئے پریشانی کا باعث ہیں ، دھماکے میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہیں ، مریم اورنگ زیب
کوئٹہ(اُردو پوائنٹ، اخبار تازہ ترین ، 21اپریل 2021) مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگ زیب نے کوئٹہ دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے حکومت سے سوال کیا ہے کہ ایک محفوظ اور انتہائی سکیورٹی والے علاقے میں دہشت گردی کا واقعہ کیسے ہوا۔ تفصیلات کے مطابق سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک ٹویٹ میں ن لیگ کی ترجمان مریم اورنگ زیب نے کہا بلوچستان اور کوئٹہ میں دہشت گردی کے پے درپے واقعات پوری قوم کیلئے پریشانی کا باعث ہیں ، دھماکے میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہیں۔
انہوں نے اپنے ٹویٹ میں مزید لکھا کہ ایک محفوظ اور انتہائی سکیورٹی والے علاقے میں دہشت گردی سوالہ نشان ہیں۔ انہوں نے لکھا کہ اللہ تعالی جاں بحق ہونے والوں کی مغفرت فرمائے اورپسماندگان کا صبر جمیل دے ۔
واضح رہے کہ دھماکہ کوئٹہ کے علاقے جناح روڈ پر ہوا۔ ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ دھماکہ کوئٹہ کے واحد فائیو اسٹار ہوٹل سیرینا کے پارکنگ میں ہوا۔

اس ہوٹل میں وی آئی پی شخصیات، غیر ملکی مہمان قیام کرتے ہیں۔ دھماکہ سیرینا ہوٹل کی پارکنگ میں ہوا جس کے نتیجے میں کئی گاڑیوں تباہ ہو گئیں اور آس پاس کی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے۔دھماکے کی آواز دور دراز کے علاقوں میں بھی سنی گئی۔ دھماکے کے نتیجے میں آخری اطلاعات تک 4 افراد شہید جبکہ متعدد افراد زخمی ہوگئے۔ دھماکے کے بعد امدادی ٹیمیں جائے وقوعہ پر پہنچ کر امدادی کاروائیوں میں مصروف ہیں۔ زخمی افراد کو فوری ہسپتال منتقل کیا جا رہا ہے، جبکہ سیکورٹی فورسز نے بھی علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے۔ واقعے کے بعد کوئٹہ کے ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.